• ارشد شریف قتل کیس: سپریم کورٹ کا ایس جے آئی ٹی بنانے کا حکم

    اشتہارات
  • وزیر اعظم نے پنجاب کیلئے ہیلتھ انشورنس پروگرام کا آغاز کر دیا

    خیبرپختونخوا کے بعد پنجاب کے تمام رہائشیوں کے لیے ہیلتھ انشورنس پروگرام کا آغاز کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ معاشرے میں فلاح کا سب سے بڑا کام مفت علاج کی سہولت ہے۔

    پنجاب میں نیا پاکستان صحت کارڈ پروگرام کے اجراء کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ صحت کارڈ پرعثمان بزدار، ڈاکٹریاسمین راشد کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں، جب میں نے ان کوپنجاب کو ہیلتھ کارڈ دینے کا کہا تودونوں کوبڑا جھٹکا لگا، عثمان بزدارکا سب سے زیادہ پسماندہ علاقے سے تعلق ہے، 3سالوں میں440ارب ہیلتھ انشورنس پرخرچ ہونگے۔ کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا، ہیلتھ کارڈ سے غریب لوگوں کو فائدہ ہو گا۔ یہ ہیلتھ انشورنس نہیں ہیلتھ سسٹم ہے۔ صحت کارڈ فلاحی ریاست کی جانب ایک لینڈ مارک ہے۔ کسی غریب کے گھر کینسر کا مریض ہو تو وہ مقروض ہو جاتے تھے۔ ہم نے شوکت خانم ہسپتال بنایا پھر غریبوں نے وہاں سے علاج کروایا۔ غریب شوکت خانم ہسپتال سے علاج کرا کر ٹھیک ہو کر دعائیں دیتے تھے۔ بیماری آئے اور علاج کے لیے پیسے نہ ہوں وہ سب سے مشکل وقت ہوتا ہے۔

    عمران خان نے کہا کہ احساس راشن کارڈ کے ذریعے غریبوں کوسبسڈی دیں گے، آٹا،گھی،دالوں پر30فیصد رعایت ملیں گی، پوری دنیا میں اس وقت مہنگائی ہے، مشکل وقت میں عوام کے لیے آسانیاں پیدا کریں گے، 47ارب کی 62لاکھ طلبا کواسکالرشپس دیں گے۔

    ان کا کہنا تھا کہ زیادہ تر لوگوں کو ریاست مدینہ کی سمجھ نہیں، لوگوں کی آگاہی کے لیے رحمت للعالمین اتھارٹی بنائی۔ جب نبی ﷺ نے ریاست کی سربزراہی سنبھالی تو مسلمان غریب تھے، غربت کی انتہا کے باوجود نبی ؐ نے فیصلہ کیا فلاحی ریاست بنائیں گے، نبی ؐ نے دنیا کی تاریخ کی پہلی فلاحی ریاست بنائی، ہم 74 سال سے انتظار کر رہے تھے پیسہ آئے گا تو فلاحی ریاست بنائیں گے۔

    عمران خان نے کہا کہ کورونا آیا تو اپوزیشن نے لاک ڈاؤن نہ لگانے پر تین ماہ بھلا برا کہا، کسی نے توکہا اگرکوئی کورونا سے مرے تومیرے اوپرمقدمہ درج کرنا چاہیے، میں پوچھتا تھا لاک ڈاؤن لگایا تو دیہاڑی دار لوگوں کا کیا بنے گا، پیسے والے لوگوں کو غریبوں کی فکر ہی نہیں، دنیا میں آج پاکستان کی مثال دی جاتی ہے، ہماری پالیسی کو دنیا بھر میں سراہا جاتا ہے، جب کوئی کام دل سے کیا جائے تواللہ کی برکت شامل ہوجاتی ہے۔ عالمی ادارے نے 172 ممالک کو بتایا کہ پاکستان نے اپنی معیشت کو کورونا سے کیسے بچایا۔ بھارت ایران میں کورونا سے کتنے لوگ مرے اور معیشت کو نقصان پہنچا۔ ہم نے اپنے کمزورطبقے کوبچایا اللہ نے کرم کیا۔ چین نے ووہان صوبے میں لاک ڈاؤن لگایا توہرگھر،گھرکھانا پہنچایا تھا، عالمی ماہرین نے کورونا کی پالیسی کو سراہا۔

    116 مناظر